میر شکیل الرحمٰن 209 روز سے بغیر ثبوت قید، سچ کہنے کی سزا ہے، مقررین

میر شکیل الرحمٰن 209 روز سے بغیر ثبوت قید، سچ کہنے کی سزا ہے، مقررین 106

راولپنڈی / لاہور / پشاور (نمائندگان جنگ) جنگ جیو گروپ کے ایڈیٹر انچیف میر شکیل الرحمٰن کی نیب کے ہاتھوں غیر قانونی گرفتاری کیخلاف لاہور ، راولپنڈی ، پشاور سمیت کئی شہروں میں احتجاجی مظاہرے جاری رہے جس میں سینئر صحافیوں سمیت تمام شعبہ ہائے زندگی کے افراد نے شرکت کی۔ مظاہرین نے بینرز اور پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے جن پر میر شکیل الرحمٰن کی گرفتاری، میڈیا کی آزادی پر حکومتی حملوں اور صحافیوں کے معاشی قتل عام کیخلاف نعرے درج تھے ۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ میر شکیل الرحمٰن 209روز سے بغیر ثبوت قید ہیں اور انہیں سچ کہنے کی سزا دی جاری ہے ، انشاءاللہ میر شکیل الرحمٰن بہت جلد ہم سب کے درمیان ہوں گےحق اور انصاف کی فتح ہو گی اور ملک کی آزاد عدلیہ اس غیر قانونی و غیر آئینی مقدمے میں جلد انصاف دے گی ۔ پشاور میں صحافیوں نے احتجاجی ریلی نکالتے ہوئے حکومتی اقدام کو انتقامی کارروائی اور آزادی صحافت پر حملہ قرار دیا اور کہا کہ پاکستان میں صحافت حکومتی ظلم کا شکار ہے، میڈیا کی زبان بندی ، سچ بولنے پر پابندی اور صحافیوں کا معاشی قتل عام جاری ہے ، میر شکیل الرحمان اور جنگ گروپ کو سچ اور انصاف کی آواز اٹھانے کی سزا دی جارہی ہے، حکومت میر شکیل الرحمان کو فی الفور رہا کرکے صحافیوں کا معاشی قتل عام بند کرے۔ ملک بھر کی طرح لاہور میں بھی جنگ جیو کی بلڈنگ کے سامنے احتجاجی مظاہرہ منعقد کیا گیا جس میں تقریبا 7ماہ سے غیر قانونی مقدمہ میں پابند سلاسل میر شکیل الرحمٰن کی رہائی کا مطالبہ کیا گیا احتجاجی مظاہرے میں سینئر صحافیوں ، جنگ جیو کے ورکرز سمیت عام شہریوں نے بھی کثیر تعداد میں شرکت کی۔ راولپنڈی میں بھی احتجاجی مظاہرہ کیا گیا جس میں سینئر صحا فیوں، جنگ و جیو نیوز تنظیموں اور سول سوسائٹی کے عہدیداروں نے شرکت کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں